Drawing by Mahdi T.

آزادی سب کی ملکیت ہے۔ 

میں نے اپنی کھڑکی کھولی اور باہر دیکھنے لگا۔ میں پرندوں کو اڑتا ہوا دیکھتا ہوں۔ ایک بلی کو دیوار پر چلتے ہوئے اور چڑیا کھانے کی تلاش میں۔ایک شحص جو اپنے کتے کو باہر کی سیر سے لطف اندوز ہونے کے لئے جا رہا تھا، جسے قرنطین اور تنگ آکر گھر میں رہنا چاہئے اور اس کا کتا فخر اور خوشی محسوس کرے گا، کیوں کہ اس کا مالک پہلے کی طرح اس پر الزام نہیں لگا سکتا۔

یہاں تک کہ دوسرے مہینے کے قرنطین کا خیال بھی مجھے پاگل کر دیتا ہے۔ مجھے امید ہے کہ جلد ہی اس کا خاتمہ ہوجائے گا، ورنہ اسپتالوں کے علاوہ ہمیں نفسیاتی اسپتال کے بھرنے کا انتظار کرنا پڑے گا۔

#بیٹر آئرونی

ان دنوں، جیسے میں گھر پر ہوں، تو میں اپنے پاس مجود چیزوں کے بارے میں مزید سوچتا ہوں۔میں اسکول کے بارے میں برا سوچتا تھا۔ مجھے صبح سویرے جاگنے، دانت صاف کرنے، اپنی چیزیں تیار کرنے سے نفرت تھی۔ لیکن اب، مجھے اسکول کی یاد آتی ہے۔گھر سے اسکول کے درمیان کے ان 45 منٹ کی، جب ہمیں بس پر سوار ہونے کے لئے تیز دوڑنا پڑتا تھا۔

کیا  آپ یقین کر سکتے ہیں؟ روزانہ، لاشعوری طور پر جلدی سے جاگنا، اپنے دانت صاف کرنا، چہرہ دھونا… اور اچانک! 

مجھے یاد ہے کہ کوروناویرس کی وجہ سے اسکول بند ہوگئے تھے، لیکن میں مایوس نہیں ہوں، میں صرف اس تاریکی خواب کے ختم ہونے کا انتظار کر رہا ہوں۔ لیکن اب سے میں اپنے پاس موجود چیزوں کی تعریف کرنے کا وعدہ کرتا ہوں۔

#روشن مستقبل

میں صحن میں تنہا بیٹھا ہوا تھا۔ ایک لال کبوتر میز پر آیا اور پوچھا:

آپ خاموش اور تنہا کیوں ہیں؟

ہممم… میں نئے وائرس کی وجہ سے قید ہونے سے تنگ ہوں۔

اوہ… میں سمجھ گیا لیکن کیا آپ شہر کے ان بے گناہ قیدیوں کے بارے میں جانتے ہیں، جنہیں عمر قید کی سزا سنائی گئی ہے؟

نہیں! 

اگر آپ شہر کے چڑیا گھر میں جائیں تو آپ انہیں وہاں دیکھ یسکتے ہیں۔ وہاں، شیر بادشاہ نہیں ہے، ریچھ نطاقتور نہیں ہے،  بندر  خوش نہیں ہے۔

وہ پریشان ہوکر چلا گیا۔ میں نے اس کی جاتے ہوئے دیکھا اور شرمندہ اور اپنے آپ کو مجرم محسوس کیا۔ مجھے احساس ہوا کہ آزادی سبھی جانداروں کی ہے۔

# آزادی

#کورونا وائرس