Photo by Migratory Birds Team

پناه گزین  پرندے اخبار کا پورا سال!

14 اپریل کو، ہم نے مہاجرین پرندوں کے اخبار کی پہلی سالگرہ کا کیک کاٹا  اور شمع بجایا!نیک خواہشات  مہاجرین پرندوں کےلئے۔

ایک سال گزر گیا،اسکی خوش حالی اور بدحالی کے دِن کےساتھ،اسکی ہنسی اور رونے کےساتھ،اسکی امیدوں اور نا امیدوں کےساتھ.

تجربات، جذبات اور رابطوں سے بھرے ہوئے وقت!

 اخبار کی پہلی سالگرہ کے ساتھ، ایک فلم میرے دماغ میں گردش کر رہا تها.MT فلم کا آغاز کیمپس اششش کے باغوں سے شروع ہوا. پندرہ افغان اور يونانئ لڑکیاں تھے اور  جنہوں نے پلاسٹک کے ايك ٹکڑے پر درختوں کی سایہ کے نیچے بیٹھ کر ایک فوٹوگرافی کیریئر لینے کے لئے سیکھا. اخبار لکھنے کا خيال ہمارے دماغ میں آیا جب صحافیوں کا ایک گروہ کیمپ میں داخل ہوا اور لوگ  انٹرویو نہیں دینا چاہتے تھےکیونکے
لوگوں کا خیال تھا کہ یہ  انٹرویو کسی کے ہاتھ  بھی پہنچ نہیں سکتے، یا اگر کیمپ سے باہر لوگوں کے لئے دستیاب ہوجائے تو، ضرور بہت سے مسائل حل ہو سکتے ہیں،جسے کہا گیا  اسے انہے  ہٹا دیا گیا ہے اور وہاں سے ایک فیصلہ ہوا کےہم  اپنے آپ کےلئے خود صحافی اور میڈیا بنائے ہیں، اور ایک اخبار میں تارکین وطن کے بارے میں اپنے الفاظ اور کہانیاں لکھئے.

ہم نے غیر مناسب جگہوں سے تمام مسائل کو لکھنے اور آنسووں اور چالوں اور مذاق کو سننے لگے، لیکن ہم کھڑا ہوگئے اور بھر کبھی پیچھے نہیں گئے ہم نے اخبارکو «ہجرتی پرندوں» کا نام دیا کیونکہ اس وجہ سے کہ تمام مصنفوں کے دل میں چلنے کی امیدیں ابہر
  رہی تھیں. بیچ راستے میں، گروپ میں سے بہت سے لڑکیوں نے ان کی نصف شدہ سفر آخر میں ختم کرنے کا فیصلہ کیا، اور ہم نے ان سے ان کے آنسو کے ساتھ تھکا ہوا اور ان کو بھلا دیا، اور ہم تمام تاریکی اور پرنٹ کرنے کے لئے امید کی امیدیں تھے. اخبار کا کام آٹھ ماہ تک جاری رہا، ہم نے آٹھ مہینے تک کوشش کی، ہم ذلیل ہوئے، کچھ ہم مایوس تھے، اور اس دوران، یونانی لڑکی، ہر حال  اچھے اور خراب حال میں  ہمارے ساتھکھڑے تھے،جب ہم روتے وہ ہمارے ساتھ روتی اور ساتھ ہنستی رہتی تھی.اور وہ ہمیشہ سب کی حوصلہ افزائی کرتی اور ہمیں باور کراتی کہ ہم یہ کر کے دکھا ے گۓآٹھ ماہ گزر گے اور پہلی روزنامہ ہجرتی پرندوں کی اشاعت نکلی اور اس میں بہت فرق پایا گیا سوچا کہ یہ ایک میگزین یا کسی بھی بروشر میں شائع کیا جائےگا، لیکن ہمارا اخبار معمول کے اخبارات کی طرح تھی، جس سے ہماری بہت حوصلہ افزائی ہوی.مہینوں کی کوششوں کے بعد کتنا خوبصورت دن تھا  اور ہر طرف ہماری کا میابی کا جشن منایا جارہا تھا

اخبار کو کیمپ کے لوگوں اور کیمپ سے باہر کے لوگوں نے اسے بہت سراہا اور خیر مقدم کیا

  کیمپ میں رہنے والوں نے ہمیں بتایا کہ وہ ہماری مضمون کو پڑھنے کے بعد  رونےلگےاور وہ محسوس کرتے کہ ان کی اپنی اب بیتی ہی اور میں اسخیستورا کیمپ کے ایک شخص کی حمایت کبھی نہیں بھول سکتی جو اخبار کو پڑھنے کے

  بعد ہمارے دروازے پر آئے ,اور کہا ,میرے پاس کہنے کو کچھ نہیں ہے صرف اتنا جان لیجئے کہ اپ سب ہمارے لئیے باعث فخر ہے، اور ہمیں یقین دلایا کہ جتنا ہوسکے ہماری حمایت اور مدد کرنے کی کوشش کریں گے، اور چند سیکنڈوں کے لئے، اس نے تالیاں بجائیں اور چلےگئے  اس لمحے ہمیں بہت اچھا محسوس ہونے لگا جس کی وجہ سے آخر میں افغانی مردوں کی طرف سے ہماری حوصلہ افزائی کی گئی، اور ایک افغانی نے کیا کہلے دل سے ہماری حمایت کیاخبار کو یونانی عوام، یونانی اسکولوں اور یونیورسٹیوں کی خوب سراہا گیااور  ملی،اور ہمیں وہاں دعوت کیا گیا
اور ہمیں خوب سراہا گیا  ہمارے پہلے اخبار تیسکونیکی کے شہر میں 14 ویں بین الاقوامی کتاب میلے میں بھی پیش ہوی تھی، جو ہمارے لئے ایک بہترین کامیابی تھی.اور دوسری چیز یہ ہے کہ روزنامہ ہجرتی پرندے یونان میں شائع ہونے والا پہلا فارسی اور چند دیگر زبانوں کی طرح یونان میں چپتے ہیںان سب تجربات کیو جہ ہمیں اپنے کام اور اچھے طریقے سے کرنے کا حوصلہ ملا،اور دوسری اشاعت کےلئے میں افغان لڑکیوں کو اپنے ساتھ رکھنا چاہئی تہی.آہستہ آہستہ سے ہجرتی پرندے کی کامیابی کی آواز اتن اور یونان کے دیگر شہروں سے ہوتے ہوئے دیگر ممالک پہنچے،اور ہمارا مضمون اسپین کے ایک مقامی اخبار میں ہسپانوی زبان میں بھی  شائع ہوئی۔جرمنی، اٹلی اور ماراکو کے آسمانوں پر ہجرتی پرندے  اڈان بھرنے لگےہمارے کچھ مضامین امریکی انٹرنیٹ سائٹوں پر بھی شائع ہوئیاخبار میں، ہم نے اپنے امیگریشن وجوہات کے بارے میں لکھا، ہماری جماعتوں کی جانب سے ہماری خواہشات کی حمایت کی اور زندگی کی امید، ایک سبز باغ کے ساتھ جو راز کے سامنے باپ کی کوششوں کا نتیجہ تھا.ہم نے افغان خواتین کو لکھا، اور مجھے اس لمحے میں کتنا حیران ہوا تھا کہ ایک افغان خاتون کا خیال تھا کہ ایک افغان خاتون جو پیشہ ورانہ مصنف نہیں تھے، نے کہا کہ وہ ایک افغان لڑکی تھی. میں جواب کے جواب میں پوچھ رہا تھا، اور اس کا جواب تھا کہ اس مضمون کے مصنف بہادر خاتون تھے. مجھے اس جرئت پر ممکنہ افغان خاتون بننا ہے.ایک طرف مجھے اچھا لگ رہا تھا کہ میری باتیں ان کے دلوں میں تھے اور، دوسری طرف، مجھے افسوس تھا، ایک بار جب ہم خواتین ہی ایک دوسرے
پر یقین نہیں کرتے, ہم کس طرح مردوں کو ہم پر اور ہماری صلاحیتوں پر یقین کرنے کی توقع کر سکتے ہیں. !!!!!

اخبار کے تیسری اشاعت کے بعد ہمارا روزنامہ بڑے اور بڈا ہونے لگا اخبار گروپ میں شام، عراق، پاکستان، ایران اور یونان کے بچے ہمارے ساتھ شامل ہونے،اور اب روزنامہ ہجرتی پرندے  بچوں کے اخبارات میں شامل ہوئے تھے. اب ہمارا روزنامہ سات قسم کے چپتے ہیں جو کسی کے بھی وہم واگمان میں بھی نہ تھی،
اجی ہاں، اب ہم ایک سال کی عمر والے ہجرتی پرندوں ہیں جنہوں نے سب سے اوپر پرواز کرنے کی خوشی حاصل کی ہے، اور ان سب لوگوں کے شکریہ جو ہماری پرواز اور ہمارے اخبار پر ہمارا تعاون کرتے ہیں، ان کی حوصلہ افزائی کے لئے شکریہ. اخبار کی مخالفت کرنے والوں کا ہم مشکور ہیں، جس کے ساتھ، ان کی مخالفت اور تنقید کیو جہ سے
ہمیں اپنی کمزوریوں کو دور کرنے اور ہمیں آگے بڈھنے اور جدوجہد کرنے کی طاقت دی.

ہم مستقبل کے بارے میں نہیں جانتے ہیں، لیکن ہم امید رکھتے ہیں کہ اخبار آنے والے برسوں تک پرنٹ جاری رکھیں گے، اور اگر ایسا نہیں ہوتا تو ہمارے لئے صرف اتنا ہے کہ کافی ہے ہم نے کبھی ایک ساتھ اپنی تمام یادوں سے شراکت داری کی,اخبار کے صفحے پر صفحے پر، ہم نے جو کچھ تجربات کیۓ وہ سب لکھئے، اگر  وہ اچھے تجربات نہیں تھے تو آپ اچھایو ں

پر بھروسہ کریں.اگر ہم نے خیموں کے اندر سے
لکھئے ہیں، تو آپ اپنے گھر کی امن پر اعتماد کریںاگر ہم نے بارش کے بارے میں لکھا
، تو آپ کو رنگین کمان میں یقین رکھنا چاہیے، اور اگر ہم نے جنگ کے بارے میں لکھا ہیں، تو آپ امن پر یقین کریں ، اور ہم یہ سمجھتے ہیں کہ دل سے کیجا نی والی بات ضرور  آپ سب کے دل میں بیٹھے گی.اس امید کیساتھ کہ ہجرتی پرندے پورے یورپ یا پھر ساری دنیا میں اڈان بھرے۔

Photos by Migaratory Birds Team