Artwork by Mortaza Rahimi

جن چیزوں کے بارے میں ہم بات نہیں کرتے

ہم سب کا تعلق مختلف معاشروں، مذاہب، برادریوں اور ثقافتوں سے ہے۔ ہم میں سے کچھ مختلف ممالک سے تعلق رکھتے ہیں۔ ہر ثقافت غیر رسمی اصولوں سے اُلجھا ہوئی ہے۔ لیکن میرے ملک، افغانستان میں، ہر چیز الگ طریقے سے ہوتی ہے۔ مثال کے طور پر، وہاں نسائی ازم نہیں ہے۔ عورت کو مردوں سے سوال کرنے کا کوئی حق نہیں ہے! اگر کوئی مرد خواتین کے حقوق کی حمایت کرنے کی کوشش کرتا ہے تو، معاشرہ اس کے جنس پر سوال اٹھانا شروع کر دیتا ہے اور اسے ہم جنس پرست کا خطاب دے دیتا ہے۔ اس تنگ نظری والے معاشرے اور معاشرے کی وجہ سے بہت سارے افغان باشندے اس ملک کو چھوڑ کر، بہتر زندگی کے لئے یورپ کے دروازوں میں داخل ہوئے۔ انہوں نے ایک ملک بدل لیا، لیکن ان کے خیالات اور ذہنوں کا کیا؟ کیا اب بھی ان کی سوچ پہلے جیسی ہی ہے؟ جی ہاں! کیونکہ وہ ان خاندانوں میں بڑے ہوئے ہیں جہاں لڑکوں کو صرف یہ تعلیم دی جاتی ہے کہ خواتین کا تعلق صرف باورچی خانے سے ہوتا ہے۔ میرے خیال سے اب یہ بتانے کا وقت آگیا ہے کہ یہ یورپ ہے۔ اب، ہم سب کو یہ حق حاصل ہے کہ ہم جس چیز پر یقین رکنا چاہتے ہیں اسی کو پر رکیں، اپنے مذہب رکھنا چاہتے ہیں یا بدلنا چاہتے ہیں، یا اگر ہم چاہتے ہیں تو صنفی مساوات سے بھی لطف اندوز ہوسکتے ہیں۔ 

مردوں نے ہمیشہ حقوق نسواں کی تحریک میں اہم کردار ادا کیا ہے، دوسری طرف مرد ابھی اقتدار کے عہدوں پر حاوی ہیں۔ جیسا کہ حالیہ ہراساں ہونے والے اسکینڈلز نے دیکھا ہے، کچھ مردوں کے طرزعمل نے خواتین کے کیریئر، ان کی کامیابی اور ان کی زندگیوں پر گہرے اثرات مرتب کیے ہیں۔ میں نے حال ہی میں کیمپ میں ہراساں کرنے کے بہت سے واقعات ہیں، جیساکہ ہم 4 ہفتوں کے قرنطین میں ہیں۔ میں نے کچھ مردوں سے صورتحال کے بارے میں بات کی اور اس بارے میں ان کے جوابات منفی تھے۔ در حقیقت، ہماری برادری کے مردوں کی ایک بہت بڑی اکثریت اس بات پر متفق ہے کہ صنفی مساوات اس وقت تک حاصل نہیں ہوسکتی جب تک کہ وہ خواتین کے حقوق کی حمایت کے لئے اقدامات نہ کریں۔ وہ نہیں جانتے کہ کچھ بھی ہمیشہ کے لئے نہیں رہتا ہے۔

ستمبر 2019 میں، میں انصاف برائے زیک/ زیکی ایتھنز شہر کے مظاہرے میں شامل ہونے کے لیے تیار ہورہا تھا، جب ایک نوجوان جوڑے نے مجھ سے پوچھا کہ یہاں کیا ہو رہا ہے۔ میں نے انہیں بتایا کہ 2018 میں وہاں کیا ہوا تھا اور انہوں نے بھت دلچسپی لی اور مظاہرے میں شامل ہونے میں میری مدد کی۔ ہمیں صرف تھوڑی وضاحت کی ضرورت ہے، ہمارے لوگ نہیں جانتے کہ ہمارے حقوق بھی انسانی حقوق ہیں۔ ہمارے لوگ اکثر کوئی قدم اٹھنے سے ڈرتے ہیں۔ ہم سب کو اپنے دوستوں سے ملنے کا حق اور اپنے حقوق کے دفاع کے لئے مل کر امن سے کام کرنے کا حق ہے۔ کوئی بھی ہمیں اس گرو میں شامل نہیں کرسکتا اگر ہم نہ چاہیں تو، خود سے اپنا ذہن بنانے کے خق کا، اپنی پسند کے بارے میں سوچنے کا، جو کچھ بھی ہم سوچتے ہیں اسے کہنے کا، اور دوسرے لوگوں کے ساتھ اپنے خیالات بانٹیں کا۔ مجھے لگتا ہے کہ میری برادری اور میرے ملک سے تعلق رکھنے والے سب یہ جاننے کے لئے تیار ہیں کہ زیک کوستوپلوس کون تھا!  

زیک ایک یونانی LGTBQI + کارکن اور ایچ آئی وی مثبت شخص تھا جس نے مثبت آواز کے لئے رضاکارانہ خدمات انجام دیں، جبکہ آن لائن اور اخبارات میں انسانی حقوق سے متعلق امور پر مضمون بھی لکھے۔ انہوں نے 2014 کے بلدیاتی انتخابات میں بھی یونانی ہم جنس پرست / لیسبین برادری کے صدر کی حیثیت سے خدمات انجام دی تھیں، وہ میونسپل کونسلر کے امیدوار تھے۔ حالیہ برسوں میں اس نے ایتھنز میں زکی اوہ کے کردار کے ساتھ ایک ڈریگ شوز میں بھی حصہ لیا تھا۔

افغانستان میں، کانوں میں بالی والا مرد حرام ہے۔ ایک مرد جو خواتین کے لباس پہن کر سامعین سے پہلے پرفارم کرتا ہے ان کے لیے وہ کوئی ہنر یا تفریح والی چیز ​​نہیں ہے، ان کے لئے وہ حرام ہے اور اس مرد کے گھر والے اسے بیٹا ماننے سے انکار کردیتے ہیں یا لوگ اسکے مرنے تک اس پر پتھراؤ کرتے ہیں۔ وہ پیدائشی ہومو فوبز(ہم جنس پرستوں سے نفرت کرنے والا) نہیں ہوتے، انہیں ہومو فوبیا (ہم جنس پرستوں سے نفرت کرنا) سکھایا جاتا ہے۔

لیکن زیک کوسٹوپلوس کے ساتھ جو ہوا وہ بالکل ویسا ہی تھا جیسے افغانستان میں ہوتا ہے، ایک یوروپ ملک میں بے دردی سے مار دیا، ایک آزاد ملک میں، جہاں پر ہمیں انسانی حقوق بھی حاصل ہیں۔ یہاں ہمارے پاس حقوق ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ ہر سال ہزاروں افراد زیک کوستوپولوس کے لئے انصاف طلب کرنے کے لئے جمع ہوتے ہیں۔ جیسا کہ جو لوگ اسے اچھی طرح سے جانتے ہیں انہوں نے تصدیق کی، اس کی موجودگی اب بھی ایک نہ ختم ہونے والی گرمیوں کی طرح محسوس ہوتی ہے، ان کی زندگی چیلنجوں سے کم نہیں تھی اور پھر بھی وہ رنج و غم پر فائز رہے، انہوں نے اپنے دونوں ہاتھوں سے زندگی بسر کی اور جب وہ 21 ستمبر 2018 کو اس دنیا سے رخصت ہوگئے،  اس نے ہمیشہ کے لئے آنکھیں بند کرلیں ایتھنز میں، جس جگہ وہ گھر کہتے تھے،۔

مرتضیٰ رحیمی