چارلی چیپلن: کیسے ایک ناخوش انسان نے دنیا میں خوشی لائی

جب بھی ہم چارلی چیپلن نام سنتے ہیں تو ہم ہمیشہ ان کے روشن پہلو کے بارے میں سوچتے ہیں، لیکن کیا کبھی ہم نے ان کے ناخوش، تاریکی پہلو کے بارے میں سوچا ہے؟ ان کا پورا نام چارلس اسپینسر چیپلن تھا اور وہ 1889 میں لندن میں پیدا ہوئے تھے۔ وہ صرف ایک اداکار ہی نہیں تھے، جیسا کہ ہم سب جانتے ہیں، بلکہ وہ ایک ہدایتکار، کمپوزر اور اسکرپٹ رائٹر بھی تھے۔ 

چارلی چیپلن کی فیملی کے پاس اپنا کوئی گھر نہیں تھا اور اس وجہ سے انہیں محتاج خانہ میں رہنا پڑا تھا۔ تین سال کی عمر میں ان کے والدین الگ ہوگئے تھے۔ ان کی والدہ گلوکارہ تھیں لیکن اپنی آواز کی ہڈی میں چوٹ آنے کی وجہ سے وہ اپنی ملازمت سے ہاتھ دھو بیٹھیں اور اسی وجہ سے چارلی اور ان کے سوتیلے بھائی سڈنی بہت ہی کم عمری میں بوٹ پالششر کے طور پر کام کرنے پر مجبور ہو گئے۔ آہستہ آہستہ فملی کے حالات خراب ہوتے گئے اور جب ان کی والدہ ان کی دیکھ بھال کرنے کے قابل نہ رہیں تو حکام نے دونوں بچوں کو یتیم خانے میں منتقل کر دیا۔ اس وقت چیپلن نو سال کا تھا۔ جب وہ تیرہ سال کا تھا تو اس کے والد شراب نوشی کی وجہ سے انتقال کر گئے۔ان کی والدہ سیفلیس کا شکار ہوگئیں، جو اس وقت ایک لاعلاج بیماری تھی، اس بیماری نے انہیں ذہنی پریشانی میں مبتلا کر دیا اور وہ پناہ کے لئے مصروف عمل میں تھی۔ 

چیپلن نے اپنی زندگی کی سب رکاوٹوں کو اپنی راہ میں رکاوٹ نہیں بننے دیا۔ انہوں نے میوزک ہال میں اداکار کی حیثیت سے کام کیا، اور 19 سال کی عمر میں فریڈ کارنو ٹروپ کے ساتھ معاہدہ کیا، ان کے ساتھ امریکہ کا دورہ کیا اور فلم پروڈکشن کے بارے میں سیکھا۔ 25 سال کی عمر میں، انہوں نے کی اسٹون اسٹوڈیو کے ساتھ ایک نیا معاہدہ کیا، جس میں ٹرامپ ​​کا کردار پیدا ہوا اور آخر کار چیپلن اپنی مزاحیہ صلاحیتوں کو تیار کرنے میں کامیاب ہوگئے۔ انہوں نے کبھی امید نہیں چھوڑی، بہت محنت کی اور دنیا کے مشہور لوگوں میں شامل ہوگئے۔ 

چارلی چیپلن فلموں میں ایک ہدایت کار، مصنف، کمپوزر اور اداکار تھے جو سماجی مسائل کو مزاحیہ انداز میں پیش کرتے ہیں۔ان کی فلمیں خاموش اور بغیر مکالمے کے تھیں، کیوں کہ انہیں ایسا لگتا تھا کہ وہ اپنے فن کا صحیح معنیٰ لوگوں تک پہنچا سکتے ہیں۔ چیپلن نے سنیما میں آواز کے متعارف ہونے بعد بھی خاموش فلموں کی تیاری جاری رکھی۔ ان کی مشہور فلموں میں «ماڈرن ٹائمز»، «دی گریٹ ڈکٹیٹر» او «دی کڈ» شامل ہیں۔ 

چیپلن جانتے تھے کہ فلم «دی گریٹ ڈکٹیٹر»، جو کہ اڈولف ہٹلر اور اس کے یورپ پر غلبہ حاصل کرنے کے خواب کی تعریض کرتی ہے، وہ اسے کے لیے بہت ساری پریشانیوں کا سبب بنے گی۔ پر یہ چیز اسے 1940 میں فلم بنانے سے روک نہ سکی۔ بہت ساری وجوہات تھیں جن کی وجہ سے وہ فلم بنانا چاہتے تھے اور ان میں سے ایک وجہ آخر میں لکھی گئی ایک مشہور تقریر تھی، جو محض ایک تشہیر سے زیادہ ہے۔ یہ سب کے لئے ایک واضح پیغام ہے۔ تقریر: 

«ہم ایک دوسرے کی خوشی کے لیے زندہ رہنا چاہتے ہیں – نہ کہ ایک دوسرے کی تکلیف کے لیے۔ ہم ایک دوسرے سے نفرت اور حقیر نہیں ہونا چاہتے ہیں۔ اس دنیا میں، سب کے لئے ایک کمرہ (جگہ) ہے۔ اور اچھی زمین امیر ہے اور سب کے لیے مہیا ہوسکی ہے۔ زندگی گزارنے کا طریقہ آزاد اور خوبصورت ہوسکتا ہے، لیکن ہم اپنا راستہ کھو چکے ہیں۔ لالچ نے انسانوں کی روحوں میں زہر بھر دیا ہے، دنیا کو نفرتوں سے دوچار کر دیا ہے، راج هنس نے ہمیں بدحالی اور خونریزی میں ڈال دیا ہے۔ ہم نے تیزرفتاری پیدا کی ہے، لیکن ہم نے خود کو اندر بند کرلیا ہے… ان کے لئے ہے جو مجھے سن سکتے ہیں، میں کہتا ہوں – مایوس نہ ہوں۔ جو تکلیف اب ہم پر مسلط ہے وہ صرف اور صرف لالچ کا گزرنا ہے- شخص کی تلخی جو انسانی ترقی کی راہ سے ڈرتا ہے… سپاہیوں! اپنے آپ کو خونخوار شخص کے حوالے نہ کرو – وہ شخص جو آپ کو حقیر سمجھتا ہے- آپ کو غلام بناتا ہے – جو آپ کی زندگیوں کو چلاتا ہے – جو آپ کو حکم دیتے ہیں کہ کیا کرنا ہے – کیا سوچنا ہے اور کیا محسوس کرنا ہے! جو آپ کو ڈرل کرتا ہے – آپ کو کھانا دیتا ہے- آپ کے ساتھ مویشی جیسا سلوک کرتا ہے، آپ کو لقمَہ توپ کے طور پر استعمال کرتا ہے۔ خود کو ان غیر قدرتی شخص کے حوالے نہ کریں – مشینی انسان مشینی ذہنوں اور مشین دلوں کے ساتھ! آپ مشینیں نہیں ہیں! آپ مویشی نہیں ہیں! آپ مرد ہیں! آپ کے دلوں میں انسانیت کی محبت ہے! آپ نفرت نہیں کرتے… آپ، لوگوں میں طاقت ہے – مشینیں بنانے کی طاقت ہے۔ خوشی پیدا کرنے کی طاقت! آپ لوگوں میں، اس زندگی کو ایک حیرت انگیز مہم جوئی بنانے کے لیے زندگی کو آزاد اور خوبصورت بنانے کی طاقت ہے… آئیے ہم دنیا کو آزاد کرنے کے لیے- ، قومی رکاوٹوں کو ختم کرنے کے لئے- لالچ، نفرت اور عدم رواداری کے ساتھ لڑنے کے لئے لڑیں۔ آئیے ہم دنیا کی ایک وجہ کے لئے لڑیں…» 

محمد عل ریفائی