The artist Alexey Shahov

“گرتے وقت دوبارہ اڑنا سیکھیں!”: الیکسی شاہو کا انٹرویو

فن مختلف شکلوں، اشکال، سائز اور رنگوں میں آتا ہے۔ فن ان لوگوں کو آپس میں ملاتا ہے جو جن کی پہلے آپس میں ملاقات نہیں ہوئی ہوتی یا جو ایک جیسی زبان نہیں بولتے ہیں۔ جب آپ فن کے اچھے کام کو شروع کرتے ہیں تو، آپ اپنے حواس، جسم اور دماغ سے وابستہ ہوجاتے ہیں۔ فن کی تاریخ اس قدر قابل ذکر ہے کہ آپ صرف پینٹنگ کے ایک ٹکڑے پر پوری کتاب لکھ سکتے ہیں۔ 

ایک اعلی منتخب شخص کی حیثیت سے میں نے مہینوں پہلے تک کبھی کسی مخصوص فنکار یا فن کی تعریف نہیں کی تھی، اس وقت تک جب میں نے سوشل میڈیا پر ایک ایسا دلچسپ فن پارہ دیکھا جس نے میری توجہ حاصل کی۔ مجھے پتہ چلا کہ یہ فنکار الیکسی شاہو ہے، جو کہ کرغزستان میں پیدا ہوا تھا اور تقریبا 20 سال قبل اس نے اپنے خاندان کے ساتھ جمہوریہ چیک میں ہجرت کی تھی۔ میں نے ان سے ملنے کا فیصلہ کیا اور ان کے فنکار بننے کے انتخاب پر بات کی۔  

 آپ نے کب سے ایک فنکار کی حیثیت سے اپنے راستے پر چلنے کا فیصلہ کیا؟ 

مجھے ہمیشہ اپنے ہاتھوں سے ڈرائنگ کرنا اور چیزیں بنانا پسند تھا۔ اس کا آغاز میرے بچپن میں ہوا تھا۔ میں آرٹس یونیورسٹی جانا چاہتا تھا۔ میں نے دو بار کوشش کی، لیکن میں ناکام رہا۔ بعد میں مجھے احساس ہوا کہ میرا پورٹ فولیو پیشہ ورانہ اور اتنا سنجیدہ نہ تھا۔  

لہذا میں نے اپنا انداز ڈھونڈنے کی کوشش کی۔ پچھلے پانچ سالوں میں یہ کسی اہم چیز کی طرح نظر آنے لگا ہے۔ حال ہی میں میں نے فوٹوشاپ پر کام شروع کیا۔ مجھے کلاسیکی روایتی پینٹنگ پسند ہے، جس میں ٹاٹ پر ایکریلیک رنگ ہو اور میں نے بھی کچھ کینوس پر کام کیا ہوا ہے۔ لیکن ڈیجیٹل ٹولز نے مجھے یہ احساس دلادیا کہ میں ایک خیال سے شروع کرسکتا ہوں اور واقعی مزید آگے بھڑ سکتا ہوں۔ میں آسان ٹولز استعمال کرکے فوٹوشاپ پر ٹکڑے تیار کرتا ہوں۔ یہ سب میں اپنے دماغ سے کرتا ہوں!  

کیا یہ آپ کا کل وقتی کام ہے؟ 

نہیں۔ میں اٹیلیئر میں کام کرتا ہوں جہاں پھنسے ہوئے جپسم تیار ہوتے ہیں۔ میری اپنی پروڈکشن میرے “دوسری نوکری” کی طرح ہے۔ یہ در حقیقت زندہ رہنے کے لئے میں کرنا چاہتا ہوں، لیکن اب یہ بڑھ رہا ہے۔ میں اسے کسی سنوبال کی طرح محسوس کرتا ہوں جو کہ بڑا ہوتا جارہا ہے۔ مجھے یقین اور امید ہے کہ ایک دن میں وہی کرلوں گا جو میں کرنا چاہتا ہوں۔ 

Artwork by Alexey Shahov

جدید ٹکنالوجی آپ کے کام کے ساتھ کیسے تعامل کرتی ہے؟ 

اسے پوسٹ انٹرنیٹ آرٹ کہتے ہیں۔یہ بہت دلچسپ ہے کیونکہ یہ تصویر اب بھی ڈیجیٹل ہے، لیکن مکمل طور پر نہیں۔ آپ مختصر سے وقت میں مختلف مرکب تشکیل دے سکتے ہیں۔ مجھے ذاتی طور پر مجسمہ پسند ہے۔ ہوسکتا ہے کہ آپ دیکھ سکیں کہ میرا کیا ہوا کام بھی تھوڑا بہت مجسموں کی طرح نظر آتا ہے۔ میں انہیں 3D کی طرح دکھاتا ہوں، لیکن ان میں سے زیادہ تر کسی مجسمے کی طرح ہیں۔  

الیکسی، بہت سے لوگوں کا خیال ہے کہ فنکار فنکار بنتے ہیں کیونکہ وہ ہمیشہ افسردہ رہتے ہیں۔ اس بارے میں آپ کی کیا رائے ہے؟ 

میرے خیال میں اس کی شروعات تاثر پرستوں سے ہوئی تھی۔ انہوں نے بہت سی تبدیلیوں کے ساتھ تاریخ کے انتہائی سخت دور کے ساتھ زندگی گزاری۔ وہ کلاسیکی آرٹ یا تعلیمی انداز اور تعلیمی اصولوں سے بالاتر ہوئے، لہذا وہ اجنبی ہونے لگے۔ ان کے پاس کامیابی یا پیسا نہیں تھا۔ اور جب آپ اجنبی ہوں تو یہ آسان نہیں ہوتا، کیوں کہ بڑی چیزیں آپ کو نہیں چاہنا چھوڑ دیتی ہیں۔ شاید اسی طرح یہ تاثر پیدا ہوا تھا کہ فنکار افسردہ لوگ ہوتے ہیں۔  

اگر آپ کو ماضی کے کسی فنکار کے ساتھ کام کرنے کا موقع ملا تو وہ کون سے فنکار ہونگے؟ 

وہ پکاسو اور ڈا ونچی ہونگے۔ بلکہ حال ہی میں میں نے کیتھ ہارنگ کو بھی دریافت کیا، لہذا میں ان کا بھی انتخاب کروں گا۔ میں نے ان کی کتاب “جرنلز آف کیتھ ہارنگ” پڑھی، ایک ڈائری جو کہ وہ ایک طویل عرصے سے لکھ رہے تھے۔ وہ بہت کھلے ذہن کے تھے سخت محنت کرتے ہوئے انہوں نے اپنی زندگی خوشی سے منائی۔ وہ صرف 32 سال کے تھے جب انہوں نے وفات پائی۔ آپ جانتے ہیں کہ اتنی عمر میں بہت سے لوگ ذہنی طور پر اپنے آپ کو بوڑھا سمجھتے ہیں۔ لیکن مجھے اچھا لگتا ہے جب فنکار ذہنی طور پر جوان رہتے ہیں، خواہ ان کی عمر کتنی ہی کیوں نہ ہو جائےہارنگ ہمیشہ سے 14 سالہ بچے کی طرح ہی تھے۔ اور بےشک انہوں نے مشکل زندگی  گزاری تھی، لیکن وہ ہمیشہ دوستانہ رہے اور کبھی تکبر نہ کرتے تھے۔  

نوجوان نسلیں کلاسک سے ذیادہ جدید فن کو کیوں ترجیح دیتی ہیں؟  

ہر نسل کچھ نیا چاہتی ہے، ہے نا؟ میرے خیال سے یہ ہمیشہ سے ایسا ہی ہے۔ نوجوان نسلیں بڑی پرانی نسل والوں کی بات نہیں سننا چاہتی، وہ چیزوں کو مختلف انداز میں دیکھتے ہیں۔ نئے دور ویں نئی معلومات، نئی ٹیکنالوجیز ہیں۔ سب کچھ نیا ہے! 

“مجھے اچھا لگتا ہے، جب فنکار ذہنی طور پر جوان رہتے ہیں، خواہ ان کی عمر کتنی ہی کیوں نہ ہو جائے! 

آپ کا سب سے بڑی الہام(انپاریشنکیا ہے؟ 

ثابت قدم رہیں اور آپ کو الہام مل جائے گا۔ الہام (انپاریشنہر جگہ ہےاگر آپ کھڑے رہیں تو آپ کو نہیں ملے گا۔ اگر آپ الہام ڈھونڈنا چاہتے ہیں تو آپ کو آگے بڑھتے رہنا ہوگا۔ 

Artwork by Alexey Shahov

کیا آپ کے پاس نوجوان فنکاروں کے لئے کوئی مشورے ہیں؟  

کسی نعی چیز کی تلاش میں رہیںاس سے کوئی فرق نہیں پڑتا اگر آپ نہیں جانتے کہ آپ کیا کرنا چاہتے ہیں۔ اپنا وقت زائع نہ کریںجب بھی آپ نیچے گریں تو دوبارہ اڑنے کا طریقہ سیکھنے کی کوشش کریں۔ اپنے آپ کا ایک اچھا دوست بنیںاگر آپ اپنے آپ کے دوست ہیں، تو سب کچھ ممکن ہے! 

آرٹ کا کام کسی بھی اختلاف پر قابو پا سکتا ہے اور لوگوں کو باتوں پر تبادلہ خیال اور شیئر کرنے کے لئے اکٹھا کرسکتا ہے۔ الیکسی شاہوف کے الفاظ نے مجھے ان کے فن میں اور بھی زیادہ دلچسپی دلادی اور میں نے جلد جمہوریہ چیک میں اس کے اسٹوڈیو کا دورہ کرنے کا فیصلہ کیا! 

 

مرتضیٰ رحیمی