Sketch by Neda Y.

نفسیاتی دباو  (ڈپریشن): ہمیشہ کسی بھی سرنگ کے آخر میں روشنی ہوتی ہے۔  

جب میں نے آنکھیں کھولیں تو حسب معمول کی طرح تھکی ہوئی تھی۔ میں دوبارہ سونا نہیں چاہتی تھی، لیکن میں جاگے رہنا بھی نہیں چاہتی تھی۔ میں بغیر کسی وجہ کے نفسیاتی دباو (ڈپریشن) سے تھک چکی تھی۔ میں ایک عرصے سے اپنے ذہنی دباؤ (ڈپریشن) کو چھپا رہی تھی، لیکن آخر کار میں نے فیصلہ کیا کہ میں اس بارے میں بات کروں گی! میں نے مدد طلب کی اور مجھے مدد ملی۔ اب میں ٹھیک ہوں اور ذہنی دباؤ (ڈپریشن) میں مبتلا افراد سے میں یہ کہنا چاہتی ہوں کہ “ہاں، آپ کو نفسیاتی دباو (ڈپریشن) ہوسکتا ہے، لیکن کوئی بات نہیں ہے۔ کیونکہ ہم لوگ ہیں اور ہمیں پریشانیوں کا سامنا ہے اور کوئی مسلہ نہیں ہے ”! 

درحقیقت، ڈپریشن ایسے جسم میں رہتا ہے جو دماغ کے ساتھ زندہ رہنے کے لئے لڑتا ہے اور اس کے برعکس جانے کی کوشش کرتا ہے۔ یہ ایک اداس احساس کی خصوصیت ہے جو زندگی کے تمام پہلوؤں کو متاثر کرتی ہے اور اس کا احساس نہ صرف اس کے انداز سے ہوتا ہے، بلکہ اس کے ساتھ ساتھ کسی کے سوچنے یا ردعمل سے بھی ہوتا ہے، جیسا کہ بچوں کی ماہر نفسیات محترمہ ایرینی کویلو نے مجھے بتایا تھا۔

ڈپریشن کی مختلف اقسام ہیں۔ پہلی قسم پریشان کن تکلیف ہے۔ وہ لوگ جو پریشان کن تکلیف سے دوچار ہیں اور ان کے ساتھ ہوسکنے والی یا اپنے کنٹرول سے باہر ہوسکنے والی مختلف چیزوں کے بارے میں بہت فکر مند ہوتے ہیں۔ڈپریشن کی ایک اور قسم  جس میں لوگوں کو ڈپریشن اور انماد دونوں ہونے کی وجہ سے مخلوط خصوصیات کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے (اعلی توانائی کی مدت، بہت زیادہ بات کرنا ، اور اعلی خود اعتمادی)۔ پھر، ایسیٹیکل خصوصیات آتی ہیں، جہاں لوگ خوشگوار واقعات کے بعد اچھا محسوس کرسکتے ہیں، لیکن اس کس ساتھ ساتھ زیادہ بھوک بھی محسوس کرسکتے ہیں، انہیں بہت ذیادہ سونے کی ضرورت پیش آتی ہے اور کسی بھی طرح کے انکار سے حساس ہوجاتے ہیں۔ نفسیاتی خصوصیات میں یہ بھی ہے، جس میں لوگ ان چیزوں پر یقین رکھتے ہیں جو سچ نہیں ہوتی یا ایسی چیزیں دیکھتے اور سنتے ہیں جو موجود ہی  نہیں ہوتيں۔اگلی قسم ہے کاتٹونیا۔ اس سے دوچار افراد اپنے جسم کو عام طور پر ہلا نہیں سکتے، وہ خاموش اور غیرذمہ دار ہوسکتے ہیں یا بے قابو حرکات کرسکتے ہیں۔ پیریپرتٹم ڈپریشن حمل کے دوران یا پیدائش کے بعد خواتین پر اثر انداز ہوتا ہے۔ آخر میں، موسمی نمونے ہیں، جہاں موسموں کی تبدیلیوں اور خاص طور پر سرد، گھنے مہینوں کے ساتھ علامات بدتر ہوجاتے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ دسمبر کو ڈپریشن کے خلاف لڑنے کا مہینہ سمجھا جاتا ہے۔ 

ویسے بہت سے علامات ہیں جو اس بات کی نشاندہی کرسکتے ہیں کہ کوئی فرد ممکنہ طور پر افسردگی کا شکار ہے۔ جیسا کہ محترمہ ایرینی کوالو نے کہا، ڈیپریشن کی یہ علامات عمر کے ساتھ ساتھ گہری ہوتی جاتی ہیں۔ چھوٹے بچے اسکول جانے سے انکار کرسکتے ہیں یا سر درد، پیٹ میں درد یا دیگر تکالیف ہوسکتی ہیں۔ نوجوان عمومن باہر جانا چھوڑ دیتے ہیں اور اکیلے ہوجاتے ہیں۔ ڈیپریشن کا شکار ہونے والے لوگ شاید کھانا نہیں(یا بہت زیادہ کھاتے ہیں)، وہ سو نہیں سکتے (یا بہت زیادہ سو سکتے ہیں)، وہ اپنے آپ پر دھیان دینا چھوڑ دیتے ہیں، وہ اچانک سے وزن کم کرسکتے ہیں یا وزن بڑھا سکتے ہیں۔ انہیں توجہ حاصل کرنے میں، تفصیلات کو یاد رکھنے یا فیصلے کرنے میں بھی دشواری کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے۔ وہ یا بلا وجہ، غصہ یا غمزدہ ہوسکتے ہیں، بےچینی یا خالی خالی محسوس کرسکتے ہیں۔ بعض اوقات یہ لوگ خود کشی کی کوششیں بھی کر سکتے ہیں۔ مزید سنگین علامتوں میں موت، خودکشی، خود کو نقصان پہنچانے یا دوسروں کو نقصان پہنچانے اور اس میں جارحانہ سلوک یا تحریک کے بارے میں خیالات یا باتیں شامل ہیں۔اگر آپ کو ان میں سے ایک سنگین علامت نظر آئے تو، آپ کو فوری کارروائی کرنی چائیے!

ڈپریشن ایک مسئلہ ہے، شناخت نہیں۔ اپنے آپ کو اسے حل کرنے کی کوشش کریں! یہ سوچنا بند کريں کہ آپ ناکام ہیں، کیوں کہ آپ نہیں ہیں۔ اس پر قابو پانے کے لیے، اس کے بارے میں بات کرنے اور مدد طلب کرنا ضروری ہے۔ سرنگ کے آخر میں ہمیشہ روشنی ہوتی ہے۔ ڈھونڈو اسے!

Sketch by Neda Y.

Sketch by  Νετνά Υ.