ہم سب ایک ہیں

ہمیں کب تک یہ خبریں سننی پڑیں گی کہ کتنے بے قصور لوگ ہلاک یا زخمی ہوئے ہیں؟

15 مارچ 2019 کو ایک دہشت گرد، ایک آسٹریلیائی شہری، نے نیوزی لینڈ کے شہر کرائسٹ چرچ میں دو مساجد پر حملہ کیا، جس کے نتیجہ میں کم از کم 49 افراد اپنی زندگی سے ہاتھ دھو بیٹھے اور متعدد زخمی ہوئے۔ اس نے یہ ملک میں آنے والے مسلمان پناہگزینوں کو روکنے کے لئے کیا۔بڑے پیمانے پر قاتل کرنے والے، برینٹن ٹرانٹ کے 74 صفحات پر مشتمل منشور کے مطابق، وہ بہت سی دوسری چیزوں کے علاوہ، مسلمان دہشت گردوں کے ہاتھوں مارے جانے والے 11 سالہ ایبا اکرلند کے قتل کا بدلہ لینے کی خواہش میں تھا۔ 

انتہائی مسلمانوں اور انتہائی عیسائیوں کے درمیان نفرت اور دشمنی سیکڑوں سال پرانی ہے اور وہ آج بھی جاری ہے۔ان سب جرائم اور پھانسیوں میں ایک ہی چیز مشترکہ ہے وہ یہ ہے کہ اس میں ہمیشہ بے گناہ لوگ ہی ہلاک یا زخمی ہوتے ہیں۔ 

22 جولائی 2016 کو 18 سالہ ایرانی جرمن ڈیوڈ علی سون بولی کی طرف سے میونک میں بڑے پیمانے پر فائرنگ کی گئی۔ 22 اکتوبر 2015 کو مغربی سویڈن کے کرونن اسکول میں 21 سالہ سویڈن انٹن لنڈن پیٹرسن نے تلوار سے حملہ کیا؛اسٹاک ہوم کے وسط میں ٹرک کے ذریعہ حملہ ، اپریل 12 کو 2017 کو 39 سالہ ازبک رخمت اکیلوف نے کیا؛23 مارچ 2018 کو  26 سالہ مراکشی ریڈوین لکدیم کی طرف سے جنوبی فرانس میں کارکیسون اور ٹریبیس میں کیے گئے حملے؛ اور 18 فروری 2018 کو 22 سالہ خلیل خلیلوف کے طرف سے روس کے شہر کلیر میں چرچ کے باہر شکاری رائفل سے حملہ، یہ سب پچھلے سالوں کے دہشت گردی کے کچھ واقعات میں سے ہیں۔ان حملوں میں 70 سے زیادہ بے گناہ افراد ہلاک اور بہت سے زخمی ہوئے تھے، اس کے باوجود میڈیا کی کوریج بہت کم ہے۔

نیوزی لینڈ میں حملے کے بعد وزیر اعظم جیکنڈا آرڈرن نے اپنے خطاب میں واضح کیا کہ مجرم برینٹن ترانٹ ایک دہشت گرد تھا۔ اپنے اختتامی الفاظ میں اس نے لوگوں سے یہ کہتے ہوئے متحد ہونے کا مطالبہ کیا کہ «ہم سب ایک ہیں»۔  

 کیا ہم ہیں؟ کب ہم واقعی ایک ہونگے؟ قوموں کے مابین سرحدیں کب ختم ہونگی؟   سیاسی، معاشرتی اور معاشی مفادات کب ختم ہوں گے؟ ہم سب اکٹھے کب ہوں گے؟ کب ہم کسی کے رنگ،اس کے خدا جس پر وہ یقین کرتا ہو، یا ان کے آبائی وطن سے ان کے بارے میں اندازہ لگانا چھوڑیں گے؟ ہم ایک کب ہو نگے؟

محمد عل ریفائی